Who We Are 2017-06-11T03:56:51+00:00

Alhakeem Shifakhana® established in 1799, is an old foundation that has an around 200 years old legacy to its honorable name. The success story is studded with some sensational achievements to its credit. The crown of Alhakeem Shifakhana® is duly embellished with some of the finest jewels of their time that have been curing the ailing and hence relieving them of their pains. In this whole effort, they explored different branches of medicine raging from the Ayurveda to the Islamic system of medicine, and in this radiant rainbow every “Hakeem” has a beautiful color and shade of his own.

الحکیم شفاخانہ 1799 سنِ عیسوی کو قائم کیا گیا اور تقریباً 200 سال سے انسانی خدمت میں مصروف ہے۔ الحکیم شفاخانہ کی تاریخ سنہری کامیابیوں سے مزین ہے۔ اس ادارے نے صدیوں سے بیمار لوگوں کو ان کی تکالیف سے نجات دلانے میں اہم کردار ادا کیا ہے۔ خدمت کی ان تمام کوششوں کے دوران گزر جانے والے حُکماء نے آئیورویدک سے اسلامی طب کا سفر طے کیا اور ہر حکیم اس قوسِ قزع میں اپنا ایک الگ رنگ و مقام رکھتا ہے۔

The first man who pioneered this esteemed organization was Hakeem Karam Elahi (1772 to 1872). He started his practice in remote area of Gurdaspur (India) where he was a local land-owner. In an age of slow transportation and poor roads, it was quite an uphill task for patients to have easy access to standard treatment. Mindful of their problems, Hakeem Karam Elahi took up the mission to cure the people around.

Naturally, he began from Ayurvedic system of medicine which was immediately available to him and quite popular as well in those times. He resorted to the renowned Hakeems of the age to become a regular Hakeem, and earnestly received medical education from them. As he was a relentless seeker of excellence, so he traveled to Kashmir for gathering a number of local herbs. This gave depth and variety to his practice.

اس عالیشان اداے کی بنیاد حکیم کرم الہی(1772سے 1872) مرحوم نے1799 سن عیسوی میں رکھی۔ حکیم صاحب مرحوم  بنیادی طور پر زمیندار تھے۔گرداس پور (انڈیا) ایک دیہاتی علاقے میں مسکن  تھا۔ اس قدیم زمانہ میں خستہ حال راستے اور ذرائع آمدو رفعت نہ ہونے کے برابر تھے جس کی وجہ سے مریض کسی معیاری علاج سے محروم تھے۔ انہی محرومیوں کو مدِ نظر رکھتے  ہوئے حکیم کرم الہی مرحوم نے قرب و جوار کے لوگوں کے علاج معالجہ کی ذمہ داری نبھانے کی ٹھان لی۔

ان وقتوں میں آئیورویدک طریقہ علاج کافی مشہور اور فوری دستیاب تھا اسے اپنا لیا گیا۔ اور اس کی باقاعدہ تعلیم وقت کے مشہور وید و حُکماء سے حاصل کی۔ علاقے میں علاج معالجہ کی اشد ضرورت کے پیشِ نظرحکیم مرحوم  مزید  مہارت حاصل کرنے کیلئے کشمیر کے پہاڑی علاقوں میں جڑی بوٹیوں سے آگاہی حاصل کرنے کیلئے تشریف لے گئے۔

Hakeem Karam Elahi then imparted his hard-earned knowledge to his son Hakeem Noor Elahi (1792 to 1897). Hakeem Noor Elahi proved himself to be an able disciple of the able father. He not only took over this inheritance with honesty but also expanded it.

It was he who acted upon the saying of the Holy Prophet (Peace Be Upon Him) by travelling to Kashgar (China) to learn the Chinese system of medicine. Though, at this stage of his age, he was not able to travel further for the knowledge of medicine he passed on this thirst for more knowledge along with the already achieved one to his son Hakeem Qaim ud Din (1831 to 1923).

حکیم کرم الہی مرحوم نے تندہی سے حاصل کیا ہوا علم اپنے بیٹے حکیم نور الہی (1792 سے 1897) مرحوم کو منتقل کر دیا۔ حکیم نور الہی نے ثابت کر دیا کہ وہ بھی اپنے والد کی طرح قابل ہیں۔ آپ نے نہ صرف وراثتی علم کو سنبھالا بلکہ اس میں مزید اضافہ کیا۔

حکیم نور الہی مرحوم نے آپ سرکار ﷺ کی حدیث کو عملی طور پر اپناتے ہوئے کاشغر (چائنہ) کا سفر بغرض حصولِ علم کیا تاکہ چائنہ کی طب سے واقفیت حاصل ہو۔ چہ جائیکہ اس وقت حکیم صاحب مرحوم عمر آخری حصے میں تھے اور مزید علم کی پیاس بجھانے کیلئے سفر کرنے سے عاری تھے اپنا علم اپنے ہونہار بیٹے حکیم قائم دین(1831 سے 1923) مرحوم کو سونپ کر جہانِ فانی سے کوچ کر گئے۔

Hakeem Qaim ud Din was an ardent lover of knowledge. His thirst for knowledge carried him to Iraq which was a great center of knowledge in those days. He also benefited from the Hakeems of Iran during this journey. In Iraq, he had all the opportunity to gain knowledge of the loftiest order and he availed himself of every bit of it.

There he got real expertise in Greek (Unani) and Islamic systems of medicine. On his return to his homeland, he not only treated patients but also started giving education of medicine to his children and other people. He was survived by a number of students behind him, but it was his son Hakeem Nizam ud Din (1863 to 1944) who inherited the family tradition of medicine and carried it on.

حکیم قائم دین مرحوم علم سیکھنے کا جذبہ رکھتے تھے۔ اسی جذبے کے تحت ملک عراق کا رختِ سفر باندھا ۔ عراق چونکہ علم و ادب کا مرکز تھا۔ اس سفر کے دوران حکیم صاحب مرحوم ایران کے مختلف اطباء سے بھی مستفید ہوئے۔ حکیم صاحب مرحوم نے عراق سے بھر پور علم حاصل کیا۔

وہاں طب یونانی سے اور طبِ اسلامی سیکھنے کا بھرپور موقع میسر آیا۔ جب واپس اپنے دیس پہنچے تو علاج معالجہ کے ساتھ ساتھ نہ صرف اپنے بچوں کو تعلیم سے سرفراز کیا بالکل بہت سے شاگرد بھی آپ سے فیضاب ہوئے۔ آپ کے فرزند حکیم نظام دین (1863 سے 1944) مرحوم نے آپ کی وفات کے بعد اس علم و مطب کو سنبھالا۔

Inheriting such a rich legacy and maintaining it was a herculean task and only a person of the stature of Hakeem Nizam ud Din could do justice with it. He not only maintained the clinic but also paid attention to the incoming students who were keenly desirous of equipping themselves with the knowledge of medicine. And hence he continued it until he handed this legacy on to Hakeem Ilm ud Din (1905 to 1994).

اتنی بڑی ذمہ داری و روائتی علاج معالجہ کو سنبھالنا جوئے شیر لانے کے مترادف تھا لیکن حکیم نظام دین مرحوم نے پورے ذوق و شوق سے اس کے ساتھ انصاف کیا۔ حکیم صاحب مرحوم نے نہ صرف مطب کو توجہ دی بالکل دور دراز سے آنے والے طلباء جو کہ علم طب سے خاصہ شغف رکھتے تھے کو بھی اس مقدس علم سے ہمکنار کیا۔ بالاآخر مطب حکیم علم دین (1905 سے 1994) مرحوم کے حوالے کر کے راہی عدم ہو گئے۔

When Hakeem Ilm ud Din took over, it was not the easiest of times as the country was politically up-heaved and the movement for Pakistan was in full swing. Consequently, he had to migrate from his native land to the new born Pakistan. Here, though he was entangled with the issues of land allotment, first in Mirpurkhas (Sindh) and then at Gujranwala (Punjab), but he spared time to train his son Hakeem Muhammad Nazir (1928 to 1999) to carry on with the old task of serving the ailing humanity.

جب حکیم علم دین مرحوم نے مطب کی ذمہ داریاں سنبھالیں تو وہ وقت کوئی آسان نہیں تھا کیونکہ تحریکِ پاکستان اپنے عروج پر تھی۔ بالاآخر اپنے آبائی وطن کو چھوڑ کر پاکستان آ گئے۔ پاکستان آنے کے بعد زمین کی الاٹمنٹ کے مسائل ہوئے۔ پہلے تو میر پور خاص سندھ میں اور پھر شیخوپورہ اور گجرانوالہ کے درمیان۔ پر حکیم صاحب مرحوم نے اسی کشمکش کے دوران اپنے صاحب زادے حکیم محمد نذیر  (1928 سے 1999) مرحوم کی طبّی تربیت کر دی تھی تاکہ دکھی و بیمار لوگوں کی خدمت کے اس مقدس کام کو جاری رکھا جا سکے۔

Hakeem Muhammad Nazir stationed himself at Dharampura, Lahore and kept spreading the light of medicine in the area as well as teaching it to students. He was basically a God-drunk man and led a life of celibacy. He invited his young nephew, Hakeem Muhammad Imran Attari (1977 to date), to Lahore and trained him in the art of medicine.

حکیم محمد نذیر نے دھرم پورہ لاہور میں دواخانہ کا آغاز کیا اور نہ صرف بیمار لوگوں کی خدمت کی بالکل شاگردوں کو بھی علم طب سے خوب نوازہ۔ حکیم صاحب مرحوم نہایت سادہ شخصیت کے مالک تھے۔حکیم صاحب مرحوم نے اپنے چھوٹے بھتیجے حکیم محمد عمران عطاری (1977 سے فی الحال) کو لاہور اپنے پاس بُلا کر علم طب سے روشناس کروایا۔

It was under the auspice of Hakeem Muhammad Nazir that Hakeem Muhammad Imran Attari received his early education. Hakeem Muhammad Imran Attari proved a very eager learner and showed profound interest in this art as well as family legacy. He first got command over this inheritance and then focused his attention to the latest development in this field. He also received this precious knowledge from his maternal grandfather Hakeem Haji Muhammad Aslam (1919 to 2011).

In his quest for further knowledge of Simple Organ Pathy, he went to respected Mr. Hakeem Muhammad Iqbal Numbardar and Mr. Hakeem Moazzam Fareed (he grandson of Hakeem Dost Muhammad Sabir Multani). Hakeem Muhammad Imran Attari received formal education of B.U.M.S (Bachelor of Unani Medical Science) Fazil ut Tibb Wal Jarahat.

حکیم محمد عمران عطاری نے اپنی ابتدائی طبّی تعلیم حکیم محمد نذیر مرحوم سے حاصل کی۔ خاندانی وراثت  کو سنبھالا اور مزید علم و حکمت سے روشناس ہونے کے عزم کا اظہار کیا۔ اس سلسلے میں اپنے نانا جان حکیم حاجی محمد اسلم (1919 سے 2011) مرحوم سے بھی خوب علم طب سیکھا۔

جدید طبّی علوم و طبّی تحقیق سے بہرہ ور ہونے کیلئے اور نظریہ مفرد اعضاء کو اپنانے کیلئے محترم حکیم محمد اقبال نمبردار اور مجدد طب حکیم و ڈاکٹر دوست محمد صابر ملتانی مرحوم کے پوتے حکیم معظم فرید  کی خدمت میں بطور شاگرد ہوئے۔ ان تمام علوم سے مقدر بھر استفادہ حاصل کرنے کے ساتھ ساتھ حکومتِ پاکستان  وزراتِ صحت کے تحت پاکستان طبّی کونسل  کا چار سالہ فاضلِ طب و الجراحت کا کورس بھی امتیازی نمبروں سے مکمل کیا۔ اور تاحال حصولِ علم کیلئے سرگرداں ہیں۔

Alhakeem Shifakhana® takes great pride in its valuable legacy that it has inherited. It intends to further the cause of serving the suffering humanity with the same dedication, sincerity and honesty. Alhakeem Shifakhana® aims at supplying our respectful readers with the authentic information about health, diseases (signs, symptoms, causes, prevention, treatment, best quality herbal products) anatomy, physiology, pathology, hygiene, herbs and much more.

الحکیم شفاخانہ کو اس مقدس کام اور مقام پر فخرہے۔ الحکیم شفاخانہ اسی انسانی خدمت کے جذے کو بڑی ایمانداری اور خلوصِ دل سے جاری رکھے ہوئے ہے۔ ہمارا مقصد ہے کہ ہم آپ معزز قارئین و صارفین کو صحت، بیماریوں، علامات و نشانیوں، وجوہات، حفاظتی تدابیر، علاج، اور بہترین و خالص دیسی ادویات، اور جڑی بوٹیوں کے بارے میں مستند معلومت فراہم کریں۔